Arif Aajakia unveils Pakistan’s accession of Balochistan in the name of Islam

ویڈیوز

عارف آجکیہ بلوچستان اور اس کی طویل عرصے سے کھوئی ہوئی آزادی کے بارے میں آواز اٹھاتے ہیں۔ وہ 1971 کے بلوچستان اور بنگلہ دیش کے درمیان تفریق کے ساتھ آغاز کرتا ہے۔ جب کہ بنگلہ دیش جو پاکستان کی تحریک میں سب سے آگے تھا اس سے قبل مشرقی پاکستان تشکیل دیا گیا تھا، بلوچستان کبھی بھی پاکستان کا حصہ نہیں تھا۔ انگریزوں کے دور حکومت میں بھی، بلوچستان، ایک پہاڑی علاقہ اور قبائلی معاشرے کا گھر جس کے نمائندے خان آف قلات تھے، انگریزوں کے ساتھ معاہدوں کے باوجود کسی بھی حکمرانی سے آزاد تھا۔

قابل ذکر بات یہ ہے کہ ہندوستان اور پاکستان کی آزادی سے 3 دن قبل 11 اگست 1947 کو بلوچستان کو ایک آزاد ریاست قرار دیا گیا تھا۔ پہلے ہندوستانی وزیر اعظم Pt. جواہر لعل نہرو اور پاکستانی گورنر جنرل محمد علی جناح نے بلوچستان کی خودمختاری کو تسلیم کیا۔ لیکن 1948 میں بلوچستان کی وکالت کرنے والے جناح نے خان آف قلات کو دھوکہ دیا۔ اس نے زبردستی بندوق کی نوک پر خان آف قلات سے بلوچستان کے الحاق کے معاہدے پر دستخط کر کے اسے پاکستان کے ماتحت کرایا۔

1948 میں مزاحمتی تحریک شروع ہوئی جو آج بھی پاکستان سے آزادی کے لیے لڑنے والے بلوچوں میں اپنا وجود دیکھتی ہے۔ براہ راست مفہوم میں، عارف عاجکیہ نے زور دیا کہ بلوچستان کبھی بھی پاکستان کا حصہ نہیں تھا، اس لیے اس کی آزادی کا حقدار ہے۔ بلوچ تحریک میں کئی اتار چڑھاؤ آئے۔ ایسے وقت بھی آئے جب ذوالفقار علی بھٹو نے ہزاروں فوجیں بلوچستان بھیجیں اور بلوچ قیادت کو ملک چھوڑ کر افغانستان میں پناہ لینے پر مجبور کیا گیا اور مشرف کے دور میں جب تحریک اپنے عروج پر تھی اور وہ وقت بھی جب نواب اکبر بگٹی، سابق وزیراعلیٰ تھے۔ بلوچستان نے پاکستانی فوج کے خلاف جنگ کا اعلان کیا جس میں وہ خود بھی شہید ہو گئے۔

اس میں مزید اضافہ کرتے ہوئے، CPEC منصوبے کے تحت بلوچستان کا حال ہی میں چین کے حوالے کرنا بلوچستان کی تباہی کو مزید اجاگر کرتا ہے کیونکہ وسائل سے مالا مال خطہ جو پورے پاکستان کو اپنی دولت فراہم کرتا ہے، خود اپنے چولہے جلانے کے لیے لکڑی پر انحصار کرتا ہے، جس کا مطلب یہ ہے کہ بلوچ بلوچ ہیں۔ پاکستانی حکام کے خلاف اپنی جدوجہد میں تنہا۔

نتیجہ نکالتے ہوئے، عارف امید کرتا ہے کہ یہ جدوجہد بلوچستان کی دیرینہ آزادی کے ساتھ ختم ہوگی اور عالمی برادری سے مطالبہ کرتا ہے کہ وہ جلاوطنی میں بلوچستان کی حکومت کی مدد کرے اور پاکستان پر دباؤ ڈالے کہ وہ بلوچستان اور اس کے عوام کی محکومی ختم کرے۔