پاکستان میں تعلیمی ادارے 18 جنوری سے مرحلہ وار کھولنے کا اعلان

پاکستان میں تعلیمی ادارے 18 جنوری سے مرحلہ وار کھولنے کا اعلان

حکومتِ پاکستان نے کرونا وائرس کے کیسز کی شرح کو مدِ نظر رکھتے ہوئے ملک بھر میں تعلیمی ادارے 18 جنوری سے مرحلہ وار کھولنے کا اعلان کیا ہے۔

نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر (این سی او سی) نے پاکستان بھر میں تعلیمی ادارے مرحلہ وار کھولنے کا فیصلے کیا ہے۔

فیصلے کے مطابق 18 جنوری سے نویں، دسویں، گیارہویں اور بارہویں جماعتوں کی درس و تدریس کا سلسلہ دوبارہ شروع ہو جائے گا۔ جب کہ پہلی جماعت سے آٹھویں جماعت تک تعلیمی سرگرمیاں یکم فروری سے شروع ہوں گی۔

این سی او سی کا اجلاس وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی اسد عمر کی سربراہی میں ہوا جس میں فیصلہ کیا گیا کہ شہروں میں کرونا وائرس کے کیسز کی شرح دیکھ کر مزید فیصلے کیے جائیں گے۔

کرونا ایڈوائزری گروپ پنجاب کے سربراہ پروفیسر ڈاکٹر محمود شوکت کے مطابق اسکول کھولنے کے معاملے پر این سی او سی کے اجلاسوں میں خاصی تفصیل سے بات چیت ہوئی جس میں این سی او سی نے رائے مانگی تھی۔ ماہرین نے کہا ہے کہ وہ اِس بات سے اتفاق کرتے ہیں کہ تعلیمی اداروں کو مستقل بند نہیں کیا جا سکتا۔ لیکن صورتِ حال دیکھ کر تعلیمی اداروں کو کھولا جائے گا۔

ہمارا ہند سے بات کرتے ہوئے ، پروفیسر ڈاکٹر محمود شوکت نے کہا کہ اسکول ، کالج اور یونیورسٹیاں ایسی جگہیں ہیں جہاں کورونا کے قواعد و ضوابط یا ایس او پیز پر عمل کرنا آسان ہے۔ جبکہ مارکیٹوں میں یہ مشکل ہے۔

ان کے بقول بچے اسکولوں میں تو نہیں جا رہے لیکن باہر پھر رہے ہیں۔ باغوں میں بھی جاتے ہیں۔ میلوں اور بازاروں میں بھی انہیں لے جایا جا رہا ہے۔ شاپنگ مالز بھی بھرے ہوئے ہیں۔ لوگ سیر و تفریح کے لیے اپنے اہلِ خانہ کے ساتھ بھی جا رہے ہیں۔ حتیٰ مری اور نتھیا گلی میں بھیڑ لگ گئی ہے۔


انہوں نے مزید کہا کہ بڑی جماعتوں میں اتنا مسئلہ نہیں ہے۔ چھوٹے بچوں کی جماعتوں میں اضافی احتیاطی تدابیر اختیار کی جا رہی ہیں جس میں ہم بچوں اور اساتذہ کو ذمہ داری دے رہے ہیں۔ اِس کے بعد اسکولوں کی جانچ پڑتال اور نگرانی کا نظام لا رہے ہیں۔

‘کسی بچے کو امتحان کے بغیر پاس نہیں کیا جائے گا’

این سی او سی کے اجلاس کے بعد ذرائع ابلاغ کے نمائندوں کو تفصیلات بتاتے ہوئے وفاقی وزیرِ تعلیم شفقت محمود نے کہا کہ اس سال کسی بچے کو امتحان کے بغیر پاس نہیں کیا جائے گا۔

ان کا کہنا تھا کہ گزشتہ آٹھ 8 ماہ کے دوران تعلیم کا بہت نقصان ہوا ہے۔ پاکستان میں ابھی بھی کرونا کے کیسز بڑھ رہے ہیں۔

اُنہوں نے مزید کہا کہ ماہرین نے این سی او سی کے اجلاس میں بتایا تھا کہ تعلیمی ادارے بند کرنے سے مثبت شرح کم ہو گی۔

شفقت محمود نے کہا کہ پہلی جماعت سے جماعت ہشتم تک جماعتیں کھولنے کا شیڈول تبدیل کر دیا گیا۔

اُنہوں نے مزید کہا کہ فیصلے کے وقت کرونا کیسز میں اضافے کی شرح ایک اعشاریہ 9 فی صد تھی۔ تعلیمی اداروں کی بندش سے انفیکشن کی شرح پر واضح اثر پڑتا ہے۔ اس وقت بھی کیسز میں اضافے کی شرح زیادہ ہے اور کیسز روزانہ کی بنیاد پر بڑھ رہے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ تمام اسکول، کالج یا نویں، دسویں، گیارہویں اور بارہویں کی کلاسز ہوتی ہیں، وہ کھل جائیں گے۔ اُس کے بعد پرائمری اسکول 25 جنوری کو کھلنے تھے وہ نہیں کھلیں گے۔ انہیں اب یکم فروری کو کھولا جائے گا۔


ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ اعلیٰ تعلیم کے ادارے بھی پہلی تاریخ کو کھلیں گی۔ آئندہ ہفتے نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر میں اجلاس میں صورتِ حال مزید جائزہ لیا جائے گا۔

پاکستان میں وائرس کے پھیلاؤ کی شرح

کرونا ایڈوائزری گروپ پنجاب کے سربراہ پروفیسر ڈاکٹر محمود شوکت کے مطابق اِس وقت پاکستان بھر میں کرونا وائرس سے متعلق پنجاب کی صورتِ حال ملک کے دیگر تین صوبوں کی نسبت قدرے بہتر ہے۔

ان کے بقول کراچی میں پہلے دن سے سب سے زیادہ کیسز سامنے آ رہے ہیں۔ ملک کے دوسرے شہروں میں صورتِ حال بدلتی رہتی ہے۔ کبھی کسی شہر میں کیس زیادہ ہو جاتے ہیں اور کبھی کسی شہر میں کیسز کی شرح قدرے کم ہوتی ہے۔

ڈاکٹر محمود شوکت کا کہنا تھا کہ پنجاب میں اِس وقت کرونا وائرس کے پھیلاؤ کی شرح چار فی صد سے زائد ہے۔ اگر 100 لوگوں کا ٹیسٹ ہو تو اُن سے چار یا پانچ افراد میں کرونا وائرس کی تشخیص ہوتی ہے۔

ان کے بقول یہ ایک خطرناک صورتِ حال ہے۔

ڈاکٹر محمود کے مطابق پنجاب میں کرونا وائرس کے کیسز مثبت آنے کی شرح چار یا ساڑھے چار فی صد سے زیادہ نہیں رہی۔ تاہم گزشتہ دو تین دِن میں کیسز مثبت آنے کی شرح زیادہ ہوئی ہے۔

اُنہوں نے بتایا کہ سندھ اور خاص طور پر صوبائی دارالحکومت کراچی میں کرونا وائرس کے کیسز سامنے آنے کی شرح 16 فی صد سے 18 فی صد تک بھی رہی ہے۔

اسکولوں کے بارے میں ہدایات کیا ہیں؟

این سی او سی کے فیصلے کے بعد اسکولوں سے متعلق ہدایات جاری کی جائیں گی، اس کے بعد ہی تعلیمی ادارے کھلیں گے۔

تعلمیی ادارے کھولنے کے 14 دن کے بعد ساری صورتِ حال کا دوبارہ جائزہ لیا جائے گا جس میں تمام حقائق کو سامنے رکھ کر فیصلہ کیا جائے گا کہ تعلیمی ادارے کھلیں رہیں گے یا نہیں۔

ڈاکٹر محمود شوکت نے بتایا کہ گزشتہ سال پاکستان میں کرونا وائرس کے پھیلاؤ کی کم سے کم شرح ایک اعشاریہ پانچ فی صد ریکارڈ کی گئی تھی۔

این ای او سی کے مطابق پاکستان میں کرونا وائرس سے صحت یاب ہونے والوں کی شرح 91 فی صد جب کہ شرح اموات دو فی صد ہے۔

یاد رہے پاکستان کی حکومت نے ملک بھر میں گزشتہ سال 26 نومبر سے 10 جنوری 2021 تک تعلیمی ادارے بند کرنے کا اعلان کا تھا۔

Photo Credit : https://static.ffx.io/images/$width_375%2C$height_211/t_crop_fill/q_86%2Cf_auto/45c32c48fa2584a903de9da9352891a7f5c04c0a

Leave a Reply

Your email address will not be published.

%d bloggers like this: