پاکستاناسٹاکمارکیٹمیںگزشتہچندماہسےمسلسلمنفیرجحانکیوںدیکھاجارہاہے؟

ایکجانبمعیشتکےخراباشاریےہیںتودوسریجانبپاکستانکےپڑوسیملکافغانستانکےگزشتہچندماہسےغیریقینیحالاتپاکستاناسٹاکمارکیٹکیکارکردگیپراثراندازہوئےہیں۔

اندونوںوجوہاتکےباعثستمبرکےآخرمیںپاکستاناسٹاکمارکیٹ (پیایسایکس) کوخطےہیکینہیںبلکہدنیاکیانتیناسٹاکمارکیٹسکےساتھرکھاجارہاہےجنہوںنےاسسالابتکبدترینکارکردگیرہیہے۔ انمیںہانگکانگاوربرازیلکیاسٹاکمارکیٹسبھیشاملہیں۔

معاشیامورپرنظررکھنےوالےامریکہکےذرائعابلاغکےادارے ’بلومبرگ‘ کیایکرپورٹکےمطابقبرازیلکیمارکیٹکاحجم 19 فیصد، ہانگکانگاسٹاکمارکیٹکا 15 فیصدجبکہپاکستاناسٹاکمارکیٹکاحجمپاکستانیروپوںمیںپانچفیصدجبکہامریکیڈالرزمیں 12 فیصدکمہواہے۔

سولملٹریتعلقاتپرقیاسآرائیوںکےاثرات

اسٹاکمارکیٹکےاتارچڑھاؤکوقریبسےدیکھنےوالےماہرینکاکہناہےکہرہیسہیکثرپاکستانمیںحالیہچنددنوںمیںفوجمیںنئیتقرریوںسےمتعلقسولملٹریتعلقاتپرجاریقیاسآرائیوںسےپیداہونےوالیغیریقینینےنکالدیہے۔

آٹھاکتوبرکوپاکستاناسٹاکمارکیٹمیں 109 پوائنٹس، 11 اکتوبرکو 648 پوائنٹساور 13 اکتوبرکوایکبارپھر 662 پوائنسکیکمیدیکھیگئی۔ جبکہ 14 جونکومارکیٹانڈیکس 48 ہزار 726 تکگیاتھا۔

گزشتہچارماہمیںاسٹاکمارکیٹمیںپانچہزارسےزائدپوائنٹسکیکمی آ چکیہے۔

معاشیماہراوراسپیکٹرمسیکوریٹیزمیںہیڈآفریسرچعبدالعظیمکاکہناہےکہخطےکیدیگرمارکیٹسکااگرپیایسایکسسےویلیوایشنکاموازنہکیاجائےتووہکافیکمہوچکیہے۔ البتہاسکےباوجودمقامیاوربینالاقوامیانویسٹرزیہاںخریداریمیںدلچسپینہیںلےرہے۔ کیوںکہملکمیںاچانکسیاسیغیریقینیبڑھگئیہے۔

شدیدمندیکےباعثامریکہکیفنانسکمپنی ’ایمایسسیآئی‘ نے، جودنیابھرکیاسٹاکمارکیٹسکیدرجہبندیکرتیہے، پاکستاناسٹاکمارکیٹکوایمرجنگمارکیٹسکیفہرستسےنکالکرفرنٹئیرمارکیٹسکےگروپمیںشاملکیاہے۔

عبدالعظیمکاکہناہےکہفرنٹئیرانڈیکسمیںشاملمارکیٹسمیںزیادہترحصصبیچنےہیکارحجانہےاورامیدیہکیجارہیہےکہنئےسالکیآمدپرہیانمارکیٹسمیںحصصکیخریداریہوگی۔

اسٹاکمارکیٹسےسرمایہکارکیوںبھاگرہےہیں؟

اسٹاکایکسچینجکوجانچنےوالےمبصرینکاکہناہےکہچندماہمیںبیرونیسرمایہکاریمیںلگبھگ 10 کروڑڈالرزسےزائدکیکمیریکارڈکیجاچکیہے۔ گزشتہماہمیںاسمیںساڑھےچارکروڑڈالرزاوررواںماہبھیابتکدوکروڑ 90 لاکھڈالرزسےزائدکیبیرونیسرمایہکاریکاآؤٹفلوہوچکاہےاوریہسلسلہگزشتہایکسالسےچلرہاہے۔

مبصرینکاخیالہےکہاسکیایکاہموجہڈالرکےمقابلےمیںروپےکیقدرمیںکمیآناہے۔ جبکہاسسےسبسےزیادہمتاثرمقامیسرمایہکاربھیہورہےہیں۔

انکےمطابقکرنسیکیقیمتمیںگراوٹکےاثراتمہنگائی، شرحسوداورخاممالکیقیمتیںبڑھنےپربھیپڑیںگے۔

اسکےساتھیہبھیدیکھاجارہاہےکہدنیابھرمیںاجناسکیقیمتوںمیںاضافہہوگیاہے۔ تیلکیقیمتیںبڑھنےکےساتھٹرانسپورٹیشناورفریٹکیقیمتیںبڑھیہیں۔

شرحسودمیںمزیداضافےکاامکان

عبدالعظیمکےمطابقکرنٹاکاؤنٹخسارےمیںاضافہاورروپےکیقدرمیںکمیکیوجہسےسرمایہکارمحتاطہوگئےہیں۔

انہوںنےامکانظاہرکیاکہاسٹیٹبینکشرحسودمزیدبڑھائےگا۔ کیوںکہاسوقتملکمیںشرحسود 7.25 فیصدہےاوراگرشرحسودکوعمومیسطحپرلایاجاتاہےتویہمہنگائیکیموجودہشرحنوفیصدسےبھیزیادہہوجائےگی۔ اورایساکیاگیاتویقینیطورپراسکااثرمنفیطورپرمعاشینموپرپڑےگا۔

آئیایمایفسےمذاکراتکیکامیابیکیاامکانات

بعضمعاشیماہرینکےخیالمیںاگربینالاقوامیمالیاتیفنڈپاکستانکوقرضےکیاگلیقسطدےدیتاہےاوراسبارےمیںامریکہمیںجاریمذاکراتکامیابہوجاتےہیںتویہمارکیٹمیںسرمایہکاروںکااعتمادبحالکرنےمیںبہتمثبتثابتہونےکاامکانہے۔

آئیایمایفسےکامیابمذاکراتکےبعدپاکستانکوایکاربڈالرزاورایشیائیترقیاتیبینکاورورلڈبینکسےبھیایکارب 40 کروڑڈالرزملنےکےامکاناتروشنہوسکتےہیں۔

ماہرینکےخیالمیںغیریقینیصورتِحالکوختمکرنےکےلیےعوامکوفیصلوںسےآگہیدیناہوگیاورمذاکراتکےنتائجکوشفافاندازمیںبیانکرنےکیضرورتہےتاکہلوگوںکواصلصورتِحالکاعلمہوسکے۔

تاہمعبدالعظیمکےخیالمیںآئیایمایفکامطالبہیہہےکہوہحکومتیمحاصلکےہدفکوبڑھاناچاہتاہےجسکےلیےگردشیقرضوںکاخاتمہاورٹیکسوصولیوںکاہدف 68 کھربروپےمقررکیاجاسکتاہے۔ البتہاسوقتیہہدفحاصلہونامشکللگرہاہے۔

دوسریجانباباعلیحبیبسیکورٹیزکےہیڈآفایکویٹیسلماناحمدنقویکاکہناہےکہانویسٹرزپریشانہیںکہاگرآئیایمایفسےمذاکراتکامیابنہہوئےتوڈالرکیقیمتکہاںجائےگی؟

انکاکہناتھاکہکرنٹاکاؤنٹ، جسکاحالپہلےہیبراہے، اسکامزیدکیاحشرہوگا۔

انہوںنےکہاکہآئیایمسےبہترڈیل، افغانستانکیصورتِحالمیںبہتریاورامریکہسےسردتعلقاتمیںگرمجوشیآنےکےساتھبینالاقوامیمارکیٹمیںاجناسکیقیمتوںمیںکچھکمیآنےسےمارکیٹکےحالاتبہترہونےکیامیدضرورہے۔

Photo Credit : https://mettisglobal.news/wp-content/uploads/2018/07/IMG1029PSX-696×438.png

Leave a Reply

Your email address will not be published.