حفاظتی خدشات: یورپ کے کئی ملکوں نے ایسٹرازینیکا ویکسین کا استعمال روک دیا

یورپ کے کئی ملکوں نے حفاظتی خدشات کے باعث برطانوی دوا ساز کمپنی ایسٹرازینیکا اور آکسفورڈ یونیورسٹی کی مشترکہ طور پر تیار کردہ ویکسین کا استعمال روک دیا ہے۔

پیر کو جرمنی، فرانس، اٹلی اور اسپین نے بعض افراد کو ویکسین دیے جانے کے بعد اُن کے خون جمنے اور خون کے نمونے متاثر ہونے کی شکایات سامنے آنے پر ایسٹرازینیکا کی ویکسین کا استعمال روکنے کا اعلان کیا۔

بعض ملکوں نے شکایت کی تھی کہ ویکسین لگانے کے بعد مریضوں کے خون کے سفید خلیوں کی تعداد میں تشویش ناک حد تک کمی واقع ہو رہی ہے جب کہ بعض کیسز میں مریضوں کا خون بہنا شروع ہو گیا تھا۔

تاہم دوا ساز کمپنی اور عالمی ریگولیٹرز کا کہنا ہے کہ ایسے کوئی شواہد نہیں ملے جس کی بنا پر یہ کہا جا سکے کہ ویکسین سے لوگ متاثر ہو رہے ہیں۔

ایسٹرازینیکا کا کہنا ہے کہ اسے ویکسین پر کوئی تحفظات نہیں اور لوگوں کی حفاظت سے متعلق ڈیٹا پر نظرِ ثانی کے باوجود مریضوں کے خون کے نمونے متاثر ہونے کے کوئی شواہد نہیں ملے۔

یاد رہے کہ جرمنی، فرانس اور اٹلی سے قبل ڈنمارک اور ناروے نے گزشتہ ہفتے ویکسین کے ری ایکشن کی شکایت کا اظہار کرتے ہوئے اس کا استعمال روک دیا تھا۔

آئس لینڈ اور بلغاریہ نے آسٹرازینیکا کے خلاف قانونی چارہ جوئی شروع کر دی ہے جب کہ آئرلینڈ اور نیدر لینڈ نے اتوار کو ویکسین مہم کی منسوخی کا اعلان کیا تھا۔

‘ویکسین سے لوگوں کے متاثر ہونے کا تعلق ثابت نہیں ہوا’

عالمی ادارۂ صحت (ڈبلیو ایچ او) نے اقوام سے اپیل کی ہے کہ وہ ویکسی نیشن مہم کو نہ روکیں جب کہ ادارے نے اپنے مشاورتی پینل سے کہا ہے کہ وہ فوری طور پر ویکسین کے نقصان دہ ہونے کی شکایات کا جائزہ لے اور اپنی تجاویز پیش کرے۔

عالمی ادارۂ صحت کی مشاورتی کمیٹی کا اجلاس منگل کو متوقع ہے جس میں ویکسین کی افادیت پر بات چیت کی جائے گی۔

ڈبلیو ایچ او کے چوٹی کے سائنس دانوں نے اس بات پر زور دیا ہے کہ کرونا ویکسین سے اموات کا کوئی ایک کیس بھی سامنے نہیں آیا ہے۔

ڈبلیو ایچ او کے سائنس دانوں پر مشتمل ٹیم کی سربراہ سومیا سوامیناتھن کا کہنا ہے کہ “ہمیں لوگوں کو افراتفری کا شکار نہیں کرنا چاہیے۔ جن ملکوں سے ویکسین کی شکایت سامنے آ رہی ہے وہاں اب تک ویکسین سے لوگوں کے متاثر ہونے کا تعلق ثابت نہیں ہو سکا ہے۔”

ادھر یورپ کے بعض ملکوں کے تحفظات کے باوجود کئی ملکوں میں ایسٹرازینیا کی کرونا ویکسین لگائی جا رہی ہے۔

تھائی لینڈ کے وزیرِ اعظم پرایوتھ چن اوچا نے منگل کو ایسٹرازینیکا کی ویکسین کی پہلی خوراک لی اور بعد ازاں میڈیا نمائندوں سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ٹیکہ لگائے جانے کے بعد وہ بہتر محسوس کر رہے ہیں۔

Photo Credit : https://s.yimg.com/ny/api/res/1.2/rDbKVkYrP4sjJpMqatlPpw–/YXBwaWQ9aGlnaGxhbmRlcjt3PTk2MDtoPTYzOS45NDQxNDM4Mjk2Mzg3/https://s.yimg.com/os/creatr-uploaded-images/2021-03/951b83e0-8631-11eb-b77f-16006d1662d2

Leave a Reply

Your email address will not be published.

%d bloggers like this: