جنُوبی کشمیر میں پچھلے ۲۴ گھنٹوں کے دوران، دو الگ الگ مقابلوں میں، انصار الغزوۂ ہند کے سربراہ سمیت ۷ دہشت گرد ہلاک

حفاظتی افواج نے جمعہ کے روز جمّوں کشمیر کے سوپیان ضلع سے فرار ہوتے وقت ترال میں مختلف دہشتگرد حذب کِ 7 دہشتگردوں کو دو الگ الگ مڈبھیڑ میں ہلاک کر دیا، ہلاک کیے گئے دہشگردون میں انصار غزوۃ الہند کِ مکھیا امتیاز شاہ، حزب المجاھدین اور لشکرِ طیبہ کے جنگجو شامل تھے، ایک پولیس افسر نے بتایا کہ مسجد میں چھُپے دہشتگردوں کو ہتھیار ڈالنے کے لیے ایک دہشتگرد کِ بھائ اور امام کو بھیجا گیا تاکہ وہ اُنھیں سمجھا کر باہر لے آئے لیکن یہ بیفائدا رہا، اسک بعد آنسو گیس کے استعمال سے اُنھیں باہر نکالا گیا جسکے بعد فائرنگ شروع ہو گیا جسمے سبھی ہلاک ہو گئے اور 4 فوجی بھی زخمی ہو گئے، اس مجادلہ میں گولہ بارود یہ گرنیڈ کا استعمال نہیں ہوا صرف دونوں طرف سے گنفرنگ ہوا

اسی دوران سرینگر کِ GOC کِ لیفٹینٹ جنرل ڈی پی پانڈے نے بتایکہ فوج دو سترٹجی پر کام کر رہی ہے جسمے علاقائی لوگو کو دہشتگرد کِ ساتھ جانے سے روکنا اور سوشل میڈیا کے ذریعے ذہنسازی کرنا شامل ہے، لیکن کیسی نے بھی ہتھیار اٹھایا تو اُسکے ساتھ سختی سے پیش آیا جائےگا، علاقائی جنگجو کو سیرنڈر کرنے کہ موقع دیا جائیگا، اُنہونے نے آگے کہا کہ کشمیر پرامن ہونا چاہتا ہے لیکن جنوبی اور مرکزی حصے میں ابھی بھی تشدد پرست خیالات باقی ہے، وہی کچھ والدین اپنے بچوں کو جنگجو سے بچانے کے لیے فوج سے رابطہ کر رہے ہیں حتٰی کی انکے بچوں کو کچھ وقت کے لیے جیل میں ہی کیوں نہ رکھا جائے، یہ ایک سبب ہے کِ جنگجو میں پچھلے سال کے مقابلے مجید گراوٹ آئی ہے

Photo Credit : https://static.abplive.com/wp-content/uploads/2020/06/11004615/shopian.jpg?impolicy=abp_images&imwidth=1200

Leave a Reply

Your email address will not be published.

%d bloggers like this: