امریکہ میں بلیک فرائیڈے پر آن لائن شاپنگ میں ریکارڈ اضافہ

امریکہ میں بلیک فرائیڈے پر آن لائن شاپنگ میں ریکارڈ اضافہ

خر میں یومِ تشکر یعنی تھینکس گیونگ سے شروع ہو کر نئے سال کے آغاز تک جاری رہتا ہے۔

ان تعطیلات میں بہت سی کمپنیاں بڑے پیمانے پر اشیا کی فروخت پر سیل لگاتی ہیں جن سے صارفین میں خریداری کا رجحان بڑھ جاتا ہے۔

رواں برس کرونا بحران کے باعث جہاں زندگی کے دوسرے کئی پہلو متاثر ہوئے ہیں وہاں شاپنگ کے رجحان میں بھی تبدیلی ہوئی ہے۔

ہمارا ہند کے مطابق ، بیشتر امریکیوں نے آن لائن شاپنگ پر بہت زیادہ انحصار کیا اور تھینکس گیونگ کے بعد اس بار بلیک فرائیڈے کی فروخت پر 9 ارب ڈالر خرچ کیے۔

آن لائن خرید و فروخت کا ریکارڈ رکھنے والی کمپنی ‘ایڈوبی اینالیٹکس’ کے مطابق رواں برس آن لائن شاپنگ میں 22 فی صد اضافہ ہوا۔ گزشتہ برس امریکی صارفین نےسات ارب 40 کروڑ ڈالر کی اشیا کی خریداری کی تھی۔

دوسری طرف روایتی انداز میں دکانوں یا سپر مارکیٹس میں خریداری میں نمایاں کمی ہوئی ہے۔ اعداد و شمار سے واضح ہوتا ہے کہ لوگوں کے اسٹورز پر جانے کے رجحان میں 52 فی صد کمی ہوئی ہے۔ یہ رجحان امریکہ کے مغربی، وسطی اور جنوبی حصوں کے مقابلے میں شمال مشرقی اور مغربی حصوں میں زیادہ رہا۔سب سے زیادہ کمی زیورات اور جوتوں میں رہی۔

کپڑوں کی فروخت میں 50 فی صد جب کہ گھریلو اشیا کی فروخت میں 39 فی صد کمی ہوئی ہے۔

ماہرین کے مطابق اس مندی کے باوجود بلیک فرائیڈے کی شاپنگ صارفین کے اسٹورز پر اشیا خریدنے کی اس موسم کی بڑی فروخت میں شمار ہو گی۔

خرید و فروخت کے حوالے سے قائم کمپنی ‘سینسر میٹکنامی’ کے سینئر ڈائریکٹر برائن فیلڈ کہتے ہیں کہ موجودہ حالات کے باوجود بہت سے لوگ ذاتی طور پر اسٹورز جاکر شاپنگ کرنا چاہیں گے۔

وہ کہتے ہیں کہ صارفین ایسا ہفتے کے وسط میں کریں گے۔ کیوں کہ ان دنوں میں مارکیٹوں اور اسٹورز پر لوگوں کا رش نہیں ہوتا۔

ان کے بقول کرسمس کے قریب اسٹورز جا کر خریداری کرنے میں اشیا زیادہ رعایتی داموں میں دستیاب ہوں گی۔

Photo Credit : https://s.yimg.com/ny/api/res/1.2/1U_jb2o8EP5_VAe8Sp0VKQ–/YXBwaWQ9aGlnaGxhbmRlcjt3PTk2MDtoPTY1NS43Nzg5OTEzMjY2OTQ1/https://s.yimg.com/os/creatr-uploaded-images/2020-11/18358b30-31a1-11eb-aff7-4af12a13df45