امریکہ: ‘اسپیلنگ بی’ کے قومی مقابلے اب آن لائن ہوں گے

امریکہ: ‘اسپیلنگ بی’ کے قومی مقابلے اب آن لائن ہوں گے

امریکہ میں ‘اسکریپس نیشنل اسپیلنگ بی’ مقابلے منعقد کرانے والے ادارے نے پیر کو اعلان کیا ہے کہ رواں برس ادارہ اپنے مقابلے آن لائن منعقد کرائے گا اور صرف 12 کھلاڑی فلوریڈا میں قائم والٹ ڈزنی ورلڈ کے ‘ای ایس پی این’ کیمپس میں فائنل کے لیے جمع ہوں گے۔

گزشتہ برس یہ مقابلے کرونا وائرس کی عالمی وبا کی وجہ سے منسوخ کر دیے گئے تھے۔ دوسری جنگِ عظیم کے بعد یہ پہلا موقع تھا کہ سالانہ مقابلے منسوخ کیے گئے۔

منتظمین کا کہنا ہے کہ اُنہیں امید نہیں ہے کہ اس برس میموریل ڈے کے نزدیک واشنگٹن ڈی سی میں کنونشن سینٹر میں ایک بڑی تعداد میں کھلاڑی جمع ہو سکیں گے۔

اس سے پہلے یہ مقابلے ایک ہفتے میں مکمل ہو جاتے تھے اور مقابلے میں حصہ لینے والے کھلاڑی اس ہفتے کو ‘بی ویک’ کے نام سے پکارتے تھے۔

اس دفعہ یہ مقابلے کئی ہفتوں تک جاری رہیں گے اور ابتدائی مقابلے جون کے وسط میں منعقد ہوں گے۔ اس کے بعد 27 جون کو سیمی فائنل اور آٹھ جولائی کے دن فائنل ای ایس پی این پر نشر کیے جائیں گے۔

ہجے مکھی کے عبوری ایگزیکٹو ڈائریکٹر ، کیرولین مشیل نے ہمارا ہند کو بتایا: “ہم نے ابتدائی طور پر مکھی ہفتہ کا خیال ترک کردیا کیونکہ ہم سیکڑوں افراد کو ایک جگہ اکٹھا نہیں کرسکے۔” ‘

ان کا کہنا تھا ’’پھر ہم نے یہ عمدہ اور تخلیقی طریقہ اپنایا کہ ان مقابلوں کو کئی ہفتوں پر محیط کیا جائے اور یہ بچوں کے لیے مزے دار بھی ہو گا۔ میرے خیال میں اس مشکل سے نمٹنے کا یہ بہترین طریقہ ہے۔‘‘

پچھلے برس ’’بی ویک‘‘ کا منسوخ ہونا ان طلبا کے لیے بہت مایوس کن تھا جنہوں نے کئی برسوں سے ان مقابلوں کی تیاری کر رکھی تھی۔ اسپیلنگ کرنے والے بہترین کھلاڑی روزانہ کئی گھنٹوں تک مشکل ترین الفاظ کی املا اور ان کی بنیاد کی مشق کرتے ہیں۔ اس دوران وہ کھیل کود اور دوسری سرگرمیوں کی قربانی دیتے ہیں۔ ہائی سکول کے بعد وہ ان مقابلوں میں حصہ نہیں لے سکتے۔

اس سال مقابلہ کی امید کرنے والی ساتویں جماعت کی طالبہ بارہ سالہ ہرینی لوگن نے حمارا ہند کو بتایا: “مجھ سمیت بہت سے اسپیلر اس بارے میں بہت پرجوش ہیں۔ اسے مایوسی ہوئی تھی کہ وہ سکریپ پر نہیں جاسکے۔ اور پورے ہفتے کے مقابلوں کا تجربہ کریں۔

پچھلے برس کئی تنظیموں کی جانب سے اسپیلنگز یا املا کے آن لائن مقابلے کیے گئے مگر ان میں سے کسی کو بھی وہ مقام حاصل نہیں ہے جو ای ایس پی این کی جانب سے نشر کئے جانے والے سکریپس کے مقابلے کو حاصل ہے، جس کے جیتنے والے کو پچاس ہزار ڈالر کا انعام دیا جاتا ہے۔ تقریباً سو برس سے کھیلے جانے والے ان مقابلوں کے جیتنے والوں کو امریکہ کے قومی میڈیا پر بھرپور پذیرائی ملتی ہے۔

اس برس سکریپس کی جانب سے ہونے والے مقابلوں میں 50 سے زائد سیمی فائنلسٹس چننے کے لیے ابتدائی مقابلوں میں زبانی امتحان لیے جائیں گے۔

Photo Credit : https://www.kxan.com/wp-content/uploads/sites/40/2020/04/GettyImages-169686870.jpg

Leave a Reply

Your email address will not be published.

%d bloggers like this: